Urdu Sad Poetry For Ashiqs and Lovers

Urdu Sad Poetry is most used term in Urdu Poetry. It is used to show our sad feelings to someone in form of Urdu Poetry in Urdu Language. Urdu is our national language and to express feelings in our local language is most effective and responsive. So Urdu Sad Poetry is best way to impress our lovers and companions.

A Best Urdu Sad Poetry Collection

Here is a best collection of Urdu Sad Poetry given Below.

شکستہ دل هوں مگر___ مسکرا کے ملتا هوں

شکستہ دل هوں مگر___ مسکرا کے ملتا هوں
اگر یہ فن هے تو سیکھا هے ایک عذاب کے بعد

ﻣﯿﺮﮮ ﺧﺎﻟﻖ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﮮ “ﮐُﻦ ” ﮐﯽ ﻃﻠﺐ ﻣﯿﮟ ﺯﻧﺪﮦ

ﻣﯿﺮﮮ ﺧﺎﻟﻖ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﮮ “ﮐُﻦ ” ﮐﯽ ﻃﻠﺐ ﻣﯿﮟ ﺯﻧﺪﮦ
ﮬﺮ ﮔﮭﮍﯼ ﺍﯾﮏ ﻗﯿﺎﻣﺖ ﺳﮯ ﮔﺰﺭ ﺟﺎﺗﺎ ﮬﻮﮞ

ﻭﺻﻞ ﻭ ﻓﺮﺍﻕ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮨﯿﮟ ﺍﮎ ﺟﯿﺴﮯ ﻧﺎﮔﺰﯾﺮ

ﻭﺻﻞ ﻭ ﻓﺮﺍﻕ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮨﯿﮟ ﺍﮎ ﺟﯿﺴﮯ ﻧﺎﮔﺰﯾﺮ
ﮐﭽﮫ ﻟُﻄﻒ ﺍﺳﮑﮯ ﻗﺮﺏ ﻣﯿﮟ، ﮐﭽﮫ ﻓﺎﺻﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ

یہ چوڑیاں یہ پھول یہ وعدوں سے بھرے کارڈ

یہ چوڑیاں یہ پھول یہ وعدوں سے بھرے کارڈ
یہ کیا ہیں تیرے دل میں اگر کچھ بھی نہیں ہے

آنکھیں تک نچوڑ کے پی گئے

آنکھیں تک نچوڑ کے پی گئے
اُف ـــــــــــــ تیرے غم کتنے پیاسے تھے

 

ہم سے بولے محبت نہیں کرنی نہیں کرنی ساغر

ہم سے بولے محبت نہیں کرنی نہیں کرنی ساغر

روتے ہوئے وہ کہتے جا رہے تھے کیے جا رہ تھے

اب خوشئ وصل و رنج_ہجر یکساں ہیں ہمیں

اب خوشئ وصل و رنج_ہجر یکساں ہیں ہمیں،

چین سے گزرے گی ‘محشر’ زندگی، دل مرگیا
‘محشر’ لکھنوی

اِس دشت سے آگے بھی کوئی دشتِ گماں ہے

اِس دشت سے آگے بھی کوئی دشتِ گماں ہے
لیکن یہ یقیں کون دلائے گا۔۔۔۔۔۔۔ کہاں ہے
.
یہ روح کسی اور علاقے کی۔۔۔۔۔۔ مکیں ہے
یہ جسم کسی اور جزیرے کا۔۔۔۔مکاں ہے
.
کشتی کے مسافر پہ یونہی طاری نہیں خوف
ٹھہرا ہوا پانی۔۔ کسی خطرے کا نشاں ہے
.
جو کچھ بھی یہاں ہےترے ہونے سے ہے ورنہ
منظر میں جو کھلتا ہے، وہ منظر میں کہاں ہے
.
اِس راکھ سے اٹھتی ہوئی ۔۔خوشبو نے بتایا
مرتے ہوئے لوگوں کی کہاں جائے اماں ہے
.
کرتاہے وہی کام۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جو کرنا نہیں ہوتا
جو بات میں کہتاہوں۔۔یہ دل سنتا کہاں ہے
.
یہ کارِ سخن ۔۔۔۔۔۔۔۔کارِ عبث تو نہیں عامی
یہ قافیہ پیمائی نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔حسنِ بیاں ہے

 

اسیرِ دشتِ بلا کا نہ ماجرا کہنا

اسیرِ دشتِ بلا کا نہ ماجرا کہنا
تمام پُوچھنے والوں‌کو بس دُعا کہنا
یہ کہنا رات گذرتی ہے اب بھی آنکھوں میں
تمہاری یاد کا قائم ہے سلسلہ کہنا
یہ کہنا اب بھی سُلگتا ہے بدن کا چندن
تمہارا قرب تھا ایک شعلہِ حنا کہنا
یہ کہنا چاند اُترتا ہے بام پر اب بھی
مگر نہیں وہ شبِ ماہ کا مزا کہنا
یہ کہنا حسرتِ تعمیر اب بھی ہے دل میں
بنا لیا ہے مکاں تو مکاں نما کہنا
یہ کہنا ہم نے ہی طوفاں میں ڈال دی کشتی
قصور اپنا ہے دریا کو کیا بُرا کہنا
یہ کہنا ہوگئے ہم اتنے مصلحت اندیش
چلے جو لُو تو اُسے بھی خنک ہوا کہنا
یہ کہنا ہار نہ مانی کبھی اندھیروں سے
بُجھے چراغ تو دل کو جلا لیا کہنا
یہ کہنا تم سے بچھڑ کر بکھر گیا تشنہ
کہ جیسے ہاتھ سے گر جائے آئینہ کہنا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *