Collection of Allama Iqbal Poetry – The Poet of East

Allama Iqbal poetry is most famous poetry in all over the world. Allama Muhammad Iqbal is known as the poet of East. Allama Iqbal poetry is for Muslims as well as for all humanity. He is the thinker of Pakistan. Allama Iqbal was a great philosopher. Allama Iqbal poetry is for Muslims as well as for all humanity. He preach the people to define their personal, social and political existence through his poetry and wake up the Muslims from the sleep of slave. His first work in Urdu language was published as Bang-e-Dara in 1924.

Allama Muhammad Iqbal said;

“I have never considered my self a poet… I have no interest in poetic artistry. But, yes, I have a special goal in mind for whose expression I use the medium of poetry considering the condition and the customs of this country”
‘Allama Iqbal r.a.’

Allama Iqbal love the Persian language also, He says in one of his poem as

“Even though in sweetness Urdu is sugar
(but) speech method in Dari (Persian) is sweeter “

Best Collection of Allama Iqbal Poetry is given here to inspire you

جگنو کی روشنی ہے کاشانۂ چمن میں

جگنو کی روشنی ہے کاشانۂ چمن میں
یا شمع جل رہی ہے پھولوں کی انجمن میں؟
آیا ہے آسماں سے اُڑ کر کوئی ستارہ
یا جان پڑ گئی ہے مہتاب کی کرن میں؟
یا شب کی سلطنت میں دن کا سفر آیا؟
غربت میں آ کے چمکا گمنام تھا وطن میں
تکمہ کوئی گرا ہے مہتاب کی قبا کا؟
ذرہ ہے یا نمایاں سورج کے پیرہن میں؟

بنگر کہ جوئے آب چہ مستانہ می رود
مانندِ کہکشاں برگیبانِ مرغزار
در خوابِ ناز بود بہ گہوارۂ سحاب
وا کرد چشمِ شوق بہ آغوشِ کوہسارا
ز سنگ ریزہ نغمہ کشاید خرامِ او
سیمائے او چو آئینہ بے رنگ و بے غبار

   یہ دستور زباں بندی ہے کیسا تیری محفل میں

یہ دستور زباں بندی ہے کیسا تیری محفل میں
یہاں تو بات کرنے کو ترستی ہے زباں میری

علامہ اقبال رحمتہ اللہ

   جس دیس کےدہقاں کو میسر نہ ہو روزی

جس دیس کےدہقاں کو میسر نہ ہو روزی
اس دیس کے ہر خوشہءِ گندم کو جلا دو

حضرت علامہ اقبال رحمتہ اللہ

allama iqbal poetry

Tere Seene Mein Hai Poshida

Tere Seene Mein Hai Poshida Raaz-E-Zindagi Keh De
Musalman Se Hadees-E-Soz-O-Saaz-E-Zindagi Keh De

 

Dunya Ki Ameeri Sy

“Dunya Ki Ameeri Sy Mujhy Koi Matlab Nahi IQBAL

“Main Kholus Ki Gharebi Main Rehta Hon Nawabon Ki Tarah.

Daleel-E-Subah-E-Roshan Hai

Daleel-E-Subah-E-Roshan Hai Sitaron Ki Tunak Tabi
Ufaq Se Aftab Ubhra, Gya Dour-E-Garan Khawabi

   Junoon-e-Ishq se Khuda bhi na bach saka

Junoon-e-Ishq se Khuda bhi na bach saka
“IQBAL”
Tareef-e-Husne yar mein poora Quran likh dia

Pare Hai Charakh-E-Neeli Faam Se

Pare Hai Charakh-E-Neeli Faam Se Manzil Musalman Ki
Sitare Jis Ki Gard-E-Rah Hon, Woh Karwan Tu Hai

 

allama iqbal poetry

Agar mein bagbaan hota

Agar mein bagbaan hota to gulshan ko saja deta
Pakar kar dast-e-yousuf ko zulekha sai mila deta

نگاہ فقر میں شان سکندری کیا ہے

نگاہ فقر میں شان سکندری کیا ہے
خراج کی جو گدا ہو ، وہ قیصری کیا ہے!

بتوں سے تجھ کو امیدیں ، خدا سے نومیدی
مجھے بتا تو سہی اور کافری کیا ہے!

فلک نے ان کو عطا کی ہے خواجگی کہ جنھیں
خبر نہیں روش بندہ پروری کیا ہے

فقط نگاہ سے ہوتا ہے فیصلہ دل کا
نہ ہو نگاہ میں شوخی تو دلبری کیا ہے

اسی خطا سے عتاب ملوک ہے مجھ پر
کہ جانتا ہوں مآل سکندری کیا ہے

کسے نہیں ہے تمنائے سروری ، لیکن
خودی کی موت ہو جس میں وہ سروری کیا ہے!

خوش آ گئی ہے جہاں کو قلندری میری
وگرنہ شعر مرا کیا ہے ، شاعری کیا ہے!

Atta Momin Ko Phir

Atta Momin Ko Phir Dargah-E-Haq Se Hone Wala Hai
Shikoh-E-Turkamani, Zehan-E-Hindi, Nutq-E-Arabi

کلام اقبال   شکوہ – بانگ درا

ہم سے پہلے تھا عجب تيرے جہاں کا منظر
کہيں مسجود تھے پتھر ، کہيں معبود شجر
خوگر پيکر محسوس تھی انساں کی نظر
مانتا پھر کوئی ان ديکھے خدا کو کيونکر

تجھ کو معلوم ہے ، ليتا تھا کوئی نام ترا؟
قوت بازوئے مسلم نے کيا کام ترا

Tarap Sehan-E-Chaman Mein

Tarap Sehan-E-Chaman Mein, Ashiyan Mein, Shakhsaron Mein
Juda Pare Se Ho Sakti Nahin Taqdeer-E-Seemabi

allama iqbal poetry

 

انسان

مٹا دی اپنی ھستی کو اگر کچھ مرتبہ چاھے
کے دانہ خاک میں ملکر گل و گلزار بنتا ھے

“زائران کعبہ سے اقبال يہ پوچھے کوئي”
“کياحرم کا تحفہ زمزم کے سوا کچھ بھي نہيں”

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *